عمران خان کے بیٹوں کو جیل میں اپنے والد سے ملاقات کے لیے پاکستان آنے کی صورت میں دھمکیاں

لندن(ڈاکٹر اختر گلفام سے)عمران خان کے بیٹوں کو جیل میں اپنے والد سے ملاقات کے لیے پاکستان آنے کی صورت میں دھمکیاں موسال ہوءی ہیں۔برطانیہ میں مقیم سابق وزیر اعظم کے دو بیٹوں 27 سالہ سلیمان خان اور 25 سالہ قاسم خان کو ’تشدد آمیز دھمکیاں‘ دی گیی ہیں۔پاکستان میں سابق وزیر اعظم کے دیگر رشتہ داروں کو جیل کا سامنا یا ان پر فوجداری مقدمات چلائے جا رہے ہیں۔خاندان کے قریبی ذرائع نے ڈاکٹر اختر گلفام کوبتایا کہ برطانیہ میں مقیم سابق وزیر اعظم کے دو بیٹوں 27 سالہ سلیمان خان اور 25 سالہ قاسم خان کو ’تشدد آمیز دھمکیاں‘ موصول ہوئی ہیں۔ذرائع نے بتایا کہ پاکستان میں عمران خان کے دیگر رشتہ داروں نے بھی جیل کا سامنا کیا ہے یا ان پر فوجداری مقدمات چلائے جا رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ’عمران کے بھتیجے کو چھ ماہ سے فوجی جیل میں رکھا گیا ہے اور کسی کو ان کے بارے میں علم نہیں ہے۔‘ان کی بہن پر سائبر کرائم اور ڈرانے دھمکانے کے مقدمات زیر التوا ہیں۔ ان کے خاندان میں سے کچھ افراد ملک چھوڑنے کی پابندی سے پہلے ہی بیرون ملک فرار ہو گئے تھے۔ذرائع کے مطابق ’یہاں تک کہ عمران خان کے غریب گھریلو عملے کو بھی جیل میں ڈال دیا گیا ہے اور ان کے ڈرائیور اور باورچی دہشت گردی کے الزام میں مئی 2023 سے جیل میں ہیں۔‘جمعرات ہو ہونے والے انتخابات میں عمران خان کی جماعت پی ٹی آئی کا مقابلہ پاکستان کی دو جماعتوں، پاکستان مسلم لیگ (ن) پارٹی اور پاکستان پیپلز پارٹی سے ہے۔پی ٹی آئی سے ان کے انتخابی نشان ’بلے‘ کے تحت انتخابی مہم چلانے کا حق چھین لیا گیا ہے اور اس کی بجائے پارٹی رہنماؤں کو آزاد امیدوار کے طور پر الیکشن میں حصہ لینے پر مجبور کیا گیا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں